HumaZ Life Path Class Library

Full of contradictions, Fighting to unravel the Mysteries & discover my True calling and make others discover theirs through Thought-Provoking Life Path posts.Come join me in the quest for peace, discovery and knowledge. Share & View your reflections in the journey with my Words , Meet Me & Meet yourself on this pebbly road, deep trench and steep slope called – The Life Path….

Dried Leaves Blown With the Wind [ Urdu Sad Poetry ] December 1, 2009

Khushk Pattay [Dried Leaves]

Khushk pattoun ki tarah, meri arzoain urh gayeen
Jahan say chali theen, waheen akay ruk gayeen

Mein samajti thi, in pattoun mein kitna urooj hai
Huwa thumi, haqeeqat khuli, k yeh urhna baysoud hai
Urhtay urhtay badaloun pur mehloun tak puhunch gayay
Lamhay bhur mein yeh mahal bhi roee mein badal gayay
Jis taraf ley chalay, us taraf ko chul diyay
Oper jo gayay thay, ab barishoun say dhul gayay
Gonjti huyee bijliyan jo ik lumhay ko thum gayeen
Tou yeh rida orh kur qadam inke jum gayay
Is chamak say ankh bund, jo zara deyr ko ho gayee
Khouf say chehra bhura, hashar say deyhul gayay
Sahum sahum k ghomtay, gardishoun mein jhoumtay
Mayousian lipat gayeen, kafan mein simatt gayay
Akhir kar, yeh zamee pur charoun or bikhur gayay
Uthanay jo agay burhay, phir hath say nikal parhay
Jhonkay jo takraye tou, Khushk kur k chul diyay
Qudmoun k sung sung, thori dour hil parhay
Tez huwa k shour mein, yeh pur katay uth parhay
Safar k ikhtatam pur, phir apnay ghar ah basay
Neelgoun asmaa pur taray jub jugmaga uthay
Tou is roshni k rastay, wo apna dur khatkhata sakay
Apnay ghur k rastay, apnay ghur ko ah chukay
Awaz jo dub gayee, dil phurphurha uthay
Jahan say chalay thay, Waheen wapis ah basay
Ibtada ko ikhtitam say yeh deewanay mila chukay
Meri arzooun ki tarah Khushk pattay bikhur gayay
Jahan say chalay thay waheen akur ruk gayay
Khushk pattoun ki tarah, meri arzoain urh gayeen
Jahan say chali theen, waheen akay ruk gayeen

by Zuellah Huma Ahmed

Add to: Facebook | Digg | Del.icio.us | Stumbleupon | Reddit | Blinklist | Twitter | Technorati | Furl | Newsvine

—————————————————————————————————————————————————

خشک پتّے

خشک پتّوں کی طرح میری آرزویئں ا ُُڑ گیئں
جہاں سے چلی تھیں وھیں آکے ر ُک گیئں
میں سمجھی تھی اِن پتّوں میں کتنا عروج ھے
ھوا تھمی ، حقیقت کھلی کہ یہ ا ُڑنا بےسود ھے
ا ُڑتے ا ُڑتے بادلوں پر محلوں تک پہنچ گئے
لمحے بھر میں یہ محل بھی روئ میں بدل گئے
جس طرف لے چلے ، ا ُس طرف کو چل دیے
اوپر جو گئے تھے اب بارشوں سے د ُھل گئے
گُونجتی ھوئ بجلیاں جو اِک لمحے کو تھم گیئں
تو یہ ردھا ا ُوڑھ کر قدم اِن کے جم گئے
اِس چمک سے آنکھ بند ، جو ذرا دیر کو ھوگئ
خوف سے چہرہ بھرا ، حشر سے دھل گئے
سہم سہم کر گھومتے ، گردشوں میں جھومتے
مایوسیاں لپٹ گیئں ، کفن میں سمٹ گئے
آخرکار ، یہ زمیں پر چاروں ا ُور بکھر گئے
ا ُتھانے جو آگے بڑھے ، پھر ہاتھ سے نکل پڑے
جھونکے جو ٹکرائے تو ، خشک کر کے چل دیے
قدموں کے سنگ سنگ تھوڑی دور ھِل پڑے
تیز ھوا کہ شور میں یہ پر کٹے ا ُتھ پڑے
سفر کے اختتام پر پھر اپنے گھر آبسے
نیلگوں آسماں پر تارے جب جگمگا ا ُٹھے
تو اِس روشنی کے راستے ، وہ اپنا در کٹھکٹھا سکے
اپنے گھر کے راستے ، اپنے گھر کو آچکے
آواز جو دب گئ ، دل پھڑپھڑا ا ُٹھے
جہاں سے چلے تھے وہیں واپس آبسے
ابتدا کو اختتام سے یہ دیوانے ملا چکے
میری آرزوؤں کی طرح خشک پتّے بکھر گئے
جہاں سے چلے تھے وھیں آکر رُ ک گئے
خشک پتّوں کی طرح میری آرزویئں ا ُُڑ گیئں
جہاں سے چلی تھیں وھاں آکے ر ُک گیئں

 

Hijab – Poetry Behind the Veil [ Urdu Poetry] November 28, 2009

Hijab [Veil]

Aey Zindagi! Tere Hijab se ashna hum kyoun na huay
Tere Qalb mein utartay huay Khursheed say
Ja baja Hum Kyoun na huay
Humari nazroun pur purhay thay talay
Humaray qafs pur qafal yeh, ayan kyoun na huay
Yeh rishta hai deyr pa, darust ya ghalat
Jo barhtay huay sayay thay, nihaah kyoun na huay
Aey Zindagi! Teri luzzatoun mein Jo zindagi hum pa gayay
Tere rothtay huay paykur, imtahaa kyoun na huay
Teri justajo, teri arzu, teri rung-o-bu
Tere lehjay ki zurdioun say nalah , hum kyoun na huay
Aey Zindagi! Teri subz ahoun say buni yeh surgoshiaan
Rouh key mausam in ghazloun say khizaa kyoun na huay
Aey Zindagi! Tere Hijab ki Aashiqi mein Fana , hum kyoun na huay
Is nadaangi mein Deewanay hum, Naadaah kyoun na huay

by Zuellah Huma Ahmed

Add to: Facebook | Digg | Del.icio.us | Stumbleupon | Reddit | Blinklist | Twitter | Technorati | Furl | Newsvine

—————————————————————————————————————————————————

حجاب

ا ے زندگی! تیرے حجاب سے آشنا ، ھم کیوں نہ ھوۓ
تیرے قلب میں اترتے ھوۓ خورشید سے
جا بجا ھم کیوں نہ ھوۓ
ھماری نظروں پر پڑھے تھے تالے
ھمارے قفس پر ، قفل یہ عیاں کیوں نہ ھوۓ
یہ رشتہ ھے دیر پا ، درست یا غلط
جو بڑھتے ھوۓ ساۓ تھے ، نہاں کیوں نہ ھوۓ
ا ے زندگی! تیری لذّتوں میں جو زندگی ھم پا گیے
تیرے روٹھے ھوۓ پیکر ، امتحاں کیوں نہ ھوۓ
تیری جستجو ، تیری آرزو ، تیری رنگ و بو
تیرے لہجے کی زردیوں سے نالاں ، ھم کیوں نہ ھوۓ
ا ے زندگی! تیری سبز آہوں سے بُنی سرگوشیاں
روح کے موسم ا ِن غزلوں سے خزاں کیوں نہ ھوۓ
ا ے زندگی! تیرے حجاب کی عاشقی میں فنا ، ھم کیوں نہ ھوۓ
اس نادانگی میں دیوانے ھم ، ناداں کیوں نہ ھوۓ

 

[Muntazir]-منتظر November 14, 2009

منتظر

اب تو اُس لمحے کا انتظار ھے صرف
جس میں نہ ڈر ھو، نہ خوف ھو
نہ غموں کا کوئی ساتھ ھو
جس میں آلام سے فراق ھو
جس میں منزل کا طواف ھو
اب تو اُس لمحے کا انتظار ھے صرف
جس میں ھجر ھو، آزادی ھو
جس میں دوری اور ملاپ ھو
جو رنگوں کا اختلاف ھو
جس میں بیجان ھونے پہ جان آئے
جس کی حقیقت میں خواب سما جائے
جس میں سانسوں کا تھماؤ ھو
جس میں زندگی کا جھکاؤ ھو
جس میں اِس قفس سے نجات ھو
جس میں حیات کا اعتراف ھو
جس میں آنکھیں بند ھونے پر بھی
ھم پر روشنی کا غلاف ھو

by Zuellah Huma Ahmed

Add to: Facebook | Digg | Del.icio.us | Stumbleupon | Reddit | Blinklist | Twitter | Technorati | Furl | Newsvine

—————————————————————————————————————————————————

Muntazir

Ab tou us lumhay ka intazaar hai sirf
Jis mein na durh ho, na khouf ho
Na ghamoun ka koi saath ho
Jis mein alaam say firaq ho
Jis mein munzil ka tawaf ho
Ab tou us lumhay ka intazaar hai sirf
Jis mein hijr ho, azaadi ho
Jis mein duri or milaap ho
Jo rungoun ka ikhtilaaf ho
Jis mein bayjaan honay pay jaan ayay
Jis ki haqeeqat mein khuwab sama jayay
Jis mein sansoun ka thumao ho
Jis mein zindagi ka jhukao ho
Jis mein is qafs say nijaat ho
Jis mein hayaat ka ayteraaf ho
Jis mein ankhein bund honay pur bhi
Hum pur roshni ka ghilaaf ho

 

Freedom [Azaadi] – آزادی August 23, 2009

Bookmark: Add to FacebookAdd to DiggAdd to Del.icio.usAdd to StumbleuponAdd to RedditAdd to BlinklistAdd to TwitterAdd to TechnoratiAdd to FurlAdd to Newsvine

آزادی

ہاتھ پکڑ کر یاد مجھے
خود کو دنیا کرانے دو
چھید ِِستم، جو لوگ کریں تو
اس ناؤ کو ڈوب جانے دو
ان شمعوں کی محفل میں
اس شمع کو جل جانے دو
گھٹا کے ناراض آنچل میں
اس موتی کو بند جانے دو
سفر ِ ماضی پے قفل لگا کے
آزاد سفر پے جانے دو
ان رنگوں میں لبریز لڑکی کو
پھر اک رنگ ھو جانے دو
ان نینوں کے پنکھ تلے
اس ھما کو ، اب ا ُڑ جانے دو

by Zuellah Huma Ahmed

Add to: Facebook | Digg | Del.icio.us | Stumbleupon | Reddit | Blinklist | Twitter | Technorati | Furl | Newsvine

————————————————————————————————————————————————–
Azaadi

Haath pakarh kur yaad mujhey
Khud ko duniya Karanay doe
Chaid-e-sitam jo loug karein tou
Is nao ko dhoub jaanay doe
In shummoun ki mahfil may
Is shumma ko jal jaanay doe
Ghata kay naraaz Anchul mein
Is moti ko, bund jaanay doe
Safr-e-Mazi pay qafl laga kay
Azaad Safar Pay Jaanay doe
In rungoun mein lubraiz larki ko
Phir Ik rung ho janay doe
In nainooun kay punkh talay
Is Huma ko, ab urh jaanay doe

 

[Kyuon Ho?] – کیوں ھو ؟ July 23, 2009

Bookmark: Add to FacebookAdd to DiggAdd to Del.icio.usAdd to StumbleuponAdd to RedditAdd to BlinklistAdd to TwitterAdd to TechnoratiAdd to FurlAdd to Newsvine

کیوں ھو ؟

اب فراق بھی ھو اور دل نہ جلے
کیوں ایسا ھمیں، اتفاق بھی هو
جو شام کے پہلو میں دن ڈھلے
کیوں دیدہ ور دید ، تجھے دید کا ، اشتیاق بھی ھو
اب لمس پے سانس کی ، بندش پابند
کیوں ایسے  میں قفس کا ادراک بھی ھو
لمحہ لمحہ بینائ میں ، جو ہلکا ہلکا عکس بڑھے
کیوں ِاس میں شامل ھونے کا ، مدھم سا احساس بھی ھو
آیئنے کی شفّاف جلد پے ، پرھے قطرہ قطرہ تابانی کا
کیوں خود  سے  ِاس میں ملنے کا ، منعکس کچھ سباق بھی ھو
ھمارے لہجے کے خود و خال میں ، اس خاکی ڈھال میں
رنگینئ گُل جیسا پھر ، کیوں آخر اخلاق بھی ھو
جو اطراف ھو محو ، طوافِ بہار میں یہاں
گُل ِ نالاں تیری قسمت پے ، کیوں کر کوئی مذاق بھی ھو

by Zuellah Huma Ahmed

Add to: Facebook | Digg | Del.icio.us | Stumbleupon | Reddit | Blinklist | Twitter | Technorati | Furl | Newsvine

————————————————————————————————————————————————-

Kyoun Ho?


Ab firaq bhi ho or dil na jalay
Kyuon aisa humein, ittefaq bhi ho
Jo shaam k pehlu mein din dhalay
Kuon deeda wur, tujay deed ka, istiyaq bhi ho
Ab lums pay sans ki, bundish pabund
Kyuon aisay mein qufs ka, adrak bhi ho
Lumha lumha beenayi mein,jo hulka hulka aks barhay
Kyuon is mein shamil honay ka, mudhum sa ehsaas bhi ho
Ayenay ki shuffaf jild pay,parhay qatra qatra tabani ka
Kyuon khud say is mein milnay ka, munaqqus kuch sabaq bhi ho
Humaray lahjay k khud-o-khal mein, is khafi dhal mein
Rungeeni-e- gul jaisa phir, kuon akhir ikhlaq bhi ho
Jo utraaf ho mahv, tawaf-e-bahar mein yahan
Gul e nalaan teri qismat pay, kuon kar koi mazak bhi ho

 

Pearls June 7, 2009

(Pearls) موتی

خوبصورتی کے رنگوں میں پروئے موتی
جھلک کر گر چکے ھیں آسماں سے
ھم نے دامن پھیلا کر آگے
بھر لیا اِسے اِن نہ آشناؤں سے
پھر پیار کے دھاگے میں پرونے کے بعد
کامل کیا گلے سے لگا کر، جو نہ مکمل تھے
ذرا سا جھٹکنے سے ھی یہ دلفریب
تمام حدوں کو پار کر گئے
کہا تھا کہ کل آرزو کے در پہ
سجائیں گے یہ نایاب موتی
ھوگئے فاصلے بہت دور مگر
جب گِر کر بکھر پڑے یہ بدنصیب موتی
اب ھم اِن کی تلاش کیا کریں
بدگمان کر چکے ھیں یہ بےوجود موتی

جملہ حقوق محفوظ ہیں