HumaZ Life Path Class Library

Full of contradictions, Fighting to unravel the Mysteries & discover my True calling and make others discover theirs through Thought-Provoking Life Path posts.Come join me in the quest for peace, discovery and knowledge. Share & View your reflections in the journey with my Words , Meet Me & Meet yourself on this pebbly road, deep trench and steep slope called – The Life Path….

Explanation of Moti/Pearls (Creative/Reflective Urdu Poetry) December 31, 2009

Explanation of Creative/Reflective Urdu Life Path Poetry

Here’s my own personal and limited interpretation for the Poem “Moti” from an earlier post found here . If you have any thing to add or deduct, please do so in the Comment Section Below.

Moti/Pearl(s)

Khoobsurti kay rungou.n mei.n piroyay Moti
Jhalak kur gir chukay hai.n asmaa.n say
Hum ney damun phaila kur agaay
Bhur lia isay in Na ashnaou.n say
Phir pyar k dhagay mein pirounay k baad
Kamil kiya galay say laga kur, jo na mukammul thay
Zara sa jhataknay say he, Yeh Dil Fareib!!
Tumam Hudou.n ko paar kur gayay
Kaha tha k Kul Arzoo k Dur Pay
Sajayein gay yeh nayaab Moti
Ho gayay Faslay buhut dour mager
Jub gir kur bikhur parhay yeh Bud naseeb Moti
Ab hum in ki talaash kya karein
Budgumaan kur chukay hain yeh Bay wujood Moti

موتی

خوبصورتی کے رنگوں میں پروئے موتی
جھلک کر گر چکے ھیں آسماں سے
ھم نے دامن پھیلا کر آگے
بھر لیا اِسے اِن نہ آشناؤں سے
پھر پیار کے دھاگے میں پرونے کے بعد
کامل کیا گلے سے لگا کر، جو نہ مکمل تھے
ذرا سا جھٹکنے سے ھی یہ دلفریب
تمام حدوں کو پار کر گئے
کہا تھا کہ کل آرزو کے در پہ
سجائیں گے یہ نایاب موتی
ھوگئے فاصلے بہت دور مگر
جب گِر کر بکھر پڑے یہ بدنصیب موتی
اب ھم اِن کی تلاش کیا کریں
بدگمان کر چکے ھیں یہ بےوجود موتی

Strangers Na ashnaou.n / نہ آشناؤں
Complete Kamil/کامل
throw with the hand,toss,shake off,twitch,agitate Jhataknay/جھٹکنے
attractive,captivating Dil fareib /دلفریب
Rare Nayaab /نایاب

MEANING ON THE LITERAL LEVEL

Moti…What is it all about?

On a literal level, it actually mentions the Rain drops that are weaved in beautiful colors especially when they turn into a rainbow after rain. When the sky gets heavy carrying all those fully loaded clouds around and can bear no more, it lets the water fall to the ground which in a way brings moments of joy to the people below like a blessing from the Heavens above.
The people or an individual so filled with ecstasy can control their/his emotions no more and want to collect and save as much of these precious possessions (rain drops) . For this reason, they extend their embracing arms and warm containers full of emotions forward to fill them with this rain (drops) to the extent possible. They are not familiar with the nature of these rain drops or what it will bring to them but they are inspired with beauty and nature so much that they welcome them in their lives.

These drops , Exquisitely Pearly shaped, transparent and reflective carry a flood of beauty and perfection in them and the Possessor (the person who has them now) wants to adorn, beautify him/herself with it by weaving them in a necklace, worn around the neck ( like an ornament) .

The individual feels as if he/she has actually completed them as they look even more pretty and their beauty comes out/ is complemented by them.

But the person didn’t know about how Fragile, weak and Fake they are. A very little agitation, shaking off is only what it takes to Break them. Little did the person know that such a gentle blow will make them Fall apart. And they cross the limits in the sense that they break and fall apart so now they are not bonded together anymore.

The person’s fanciful fantasies and imagination had made him/her believe (wrongfully) that they will decorate themselves with these Rare Pearls as an embellishment to enhance their charm and beauty and their wishes will get a reality.

But unfortunately, the dream’s broken as now these UnFortunate Pearls are far apart since they had dispersed and scattered on the ground. There is no use finding them , recovering them, getting them back together Since the feelings that the person once held for them don’t Exist anymore. Their Dreamlike, Great Image in his/her eyes has Tarnished/broken and so has his/her Trust in Them.

MEANING ON THE NON-LITERAL/RHETORICAL LEVEL

This might have several interpretations but the underlying meaning is the same. Sometimes, we just come across such people in life that we start considering them Our Life. These people can be given several labels …they could be Friends or Relatives etc. but they sure Seem like a Blessing from God just like the much awaited Summer Rain. We develop love, care and affinity for them suddenly due to Some similarities and nice, outward behaviors that they display. We feel that we complement them in every form.
The 7th,8th lines can be interpreted in a number of ways. Like for instance, A slight misunderstanding (on their part) shows us how Fake the relationship was. It held no Promise for future. They never trusted us in the first place. OR they broke our trust or when we tried to test them, they failed.
All our dreams are broken and there remains no color anywhere anymore. Neither we can put them back in the exalted and high position that we did before, nor we can allow them any place in our life. Once the boundaries are crossed and the damage is done, it cannot be Undone!!

by Zuellah Huma Ahmed

The only aim of this blog is to invoke Reflection on the things around us through Creative and Introspective Expression in the form of Urdu and English poetry and prose. Believing on the lines where the Creator asks its beings to Reflect, meditate, think about Duniya O Mafeeha… ( دنیا و مافیہا the world around us and everything in it – seen,unseen,past, present… ) .To survey and explore new grounds and dimensions in the course of the Life path and to share and learn from others is a daunting challenge that should be taken will complete belief and faith.

Add to: Facebook | Digg | Del.icio.us | Stumbleupon | Reddit | Blinklist | Twitter | Technorati | Furl | Newsvine

 

Food for Thought – One Liner (18) December 25, 2009

” There’s life in every moment; There’s death in every moment!! “

by Zuellah Huma Ahmed

Add to: Facebook | Digg | Del.icio.us | Stumbleupon | Reddit | Blinklist | Twitter | Technorati | Furl | Newsvine

 

[Muntazir]-منتظر November 14, 2009

منتظر

اب تو اُس لمحے کا انتظار ھے صرف
جس میں نہ ڈر ھو، نہ خوف ھو
نہ غموں کا کوئی ساتھ ھو
جس میں آلام سے فراق ھو
جس میں منزل کا طواف ھو
اب تو اُس لمحے کا انتظار ھے صرف
جس میں ھجر ھو، آزادی ھو
جس میں دوری اور ملاپ ھو
جو رنگوں کا اختلاف ھو
جس میں بیجان ھونے پہ جان آئے
جس کی حقیقت میں خواب سما جائے
جس میں سانسوں کا تھماؤ ھو
جس میں زندگی کا جھکاؤ ھو
جس میں اِس قفس سے نجات ھو
جس میں حیات کا اعتراف ھو
جس میں آنکھیں بند ھونے پر بھی
ھم پر روشنی کا غلاف ھو

by Zuellah Huma Ahmed

Add to: Facebook | Digg | Del.icio.us | Stumbleupon | Reddit | Blinklist | Twitter | Technorati | Furl | Newsvine

—————————————————————————————————————————————————

Muntazir

Ab tou us lumhay ka intazaar hai sirf
Jis mein na durh ho, na khouf ho
Na ghamoun ka koi saath ho
Jis mein alaam say firaq ho
Jis mein munzil ka tawaf ho
Ab tou us lumhay ka intazaar hai sirf
Jis mein hijr ho, azaadi ho
Jis mein duri or milaap ho
Jo rungoun ka ikhtilaaf ho
Jis mein bayjaan honay pay jaan ayay
Jis ki haqeeqat mein khuwab sama jayay
Jis mein sansoun ka thumao ho
Jis mein zindagi ka jhukao ho
Jis mein is qafs say nijaat ho
Jis mein hayaat ka ayteraaf ho
Jis mein ankhein bund honay pur bhi
Hum pur roshni ka ghilaaf ho

 

Bedoun Ism – Lahza e Muqtadir June 22, 2009

لحظہِ مقتدر

اب تو اُس لمحے کا انتظار ھے صرف
جس میں نہ ڈر ھو، نہ خوف ھو
نہ غموں کا کوئی ساتھ ھو
جس میں آلام سے فراق ھو
جس میں منزل کا طواف ھو
اب تو اُس لمحے کا انتظار ھے صرف
جس میں ھجر ھو، آزادی ھو
جس میں دوری اور ملاپ ھو
جو رنگوں کا اختلاف ھو
جس میں بیجان ھونے پہ جان آئے
جس کی حقیقت میں خواب سما جائے
جس میں سانسوں کا تھماؤ ھو
جس میں زندگی کا جھکاؤ ھو
جس میں اِس قفس سے نجات ھو
جس میں حیات کا اعتراف ھو
جس میں آنکھیں بند ھونے پر بھی
ھم پر روشنی کا غلاف ھو

by Zuellah Huma Ahmed

I need a name….Please suggest One!!

سوکھے پتّے

سوکھے پتّے جب بھی شجر سے جھڑتے ھیں
نۓ آنے والوں کو خوش آمدید کہتے ھیں
اِن پر قدم رکھتے ھی ھوتا ھے شور و غل برپا
داستانِ زمانہ اپنے اندر رکھتے ھیں
اِن کی قسمت میں ھے اندھیروں میں دفن ھونا
بےجان ھو کر بھی یہ اثر رکھتے ھیں
تپتی دھوپ میں جھلس کر بھی ، یہ
برسوں کا صبر اپنے اندر رکھتے ھیں
شاخ سے کٹ کر ، جیسے قطرے مٹی میں جزب ھوکر
حیاتِ نو کا سمندر اپنے اندر رکھتے ھیں
سبز پتّے ٹہنیوں کے سنگ پیوستہ
خاموش ھیں ، زندگی کا لمبا سفر ابھی رکھتے ھیں

حقیر پتّے

اونچے محلوں سے جو آواز نکلتی ھے
وہ ھمارے لہجے سے کتنی ملتی ھے
جو صدا دیتے ھیں سوکھے پتّے
وہ کانوں تک کہاں پہنچتی ھے؟
نادان ھیں جو انہیں قدموں تلے روندتے ھیں
کچلنے سے آواز کہاں دبتی ھے؟
اِن کو حقیر سمجھنے والے دیوانے ھیں
کمزور تنکوں سے ھی آگ سلگتی ھے
اِن کی رنگت پے کیوں جاتے ھو دنیا والو
اِنھیں میں پِِنہاں طاقت سے کسی کو نئ زباں ملتی ھے
وہ سمجھتے ھیں کے نہ اہل ھو چکے ھیں یہ نہ تواں
کیا نہیں جانتے ، خس و خاشاک سے ھی دریاوِں کی روانی رکتی ھے
ذرا دیر کو کھیل اِنہیں کھیلنے دو
دیکھیں ، کھبی زرد رنگ سے بھی ھولی سجتی ھے

خشک پتّے

خشک پتّوں کی طرح میری آرزویئں ا ُُڑ گیئں
جہاں سے چلی تھیں وھاں آکے ر ُک گیئں
میں تو سمجھی تھی اِن پتّوں میں کتنا عروج ھے
ھوا تھمی ، حقیقت کھلی کہ یہ ا ُڑنا بےسود ھے
ا ُڑتے ا ُڑتے بادلوں پر محلوں تک پہنچ گئے
لمحے بھر میں یہ محل بھی روئ میں بدل گئے
جس طرف لے چلے ، ا ُس طرف کو چل دیے
اوپر جو گئے تھے اب بارشوں سے د ُھل گئے
گُونجتی ھوئ بجلیاں جو اِک لمحے کو تھم گیئں
تو یہ ردھا/ردا ا ُوڑھ کر قدم اِن کے جم گئے
اِس چمک سے آنکھ بند ، جو ذرا دیر کو ھوگئ
خوف سے چہرہ بھرا ، حشر سے دھل گئے
سہم سہم کر گھومتے ، گردشوں میں جھومتے
مایوسیاں لپٹ گیئں ، کفن میں سمٹ گئے
آخرکار ، یہ زمیں پر چاروں ا ُور بکھر گئے
ا ُتھانے جو آگے بڑھے ، پھر ہاتھ سے نکل پڑے
جھونکے جو ٹکرائے تو ، خشک کر کے چل دیے
قدموں کے سنگ سنگ تھوڑی دور ھِل پڑے
تیز ھوا کہ شور میں یہ پر کٹے ا ُتھ پڑے
سفر کے اختتام پر پھر اپنے گھر آبسے
نیلگوں آسماں پر تارے جب جگمگا ا ُٹھے
تو اِس روشنی کے راستے ، وہ اپنا در کٹھکٹھا سکے
اپنے گھر کے راستے ، اپنے گھر کو آچکے
آواز جو دب گئ ، دل پھڑپھڑا ا ُٹھے
جہاں سے چلے تھے وہیں واپس آبسے
ابتدا کو اختتام سے یہ دیوانے ملا چکے
میری آرزوؤں کی طرح خشک پتّے بکھر گئے
جہاں سے چلے تھے وھیں آکے رُ ک گئے
خشک پتّوں کی طرح میری آرزویئں ا ُُڑ گیئں
جہاں سے چلی تھیں وھاں آکے ر ُک گیئں

________

موتی

خوبصورتی کے رنگوں میں پروئے موتی

جھلک کر گر چکے ھیں آسماں سے

ھم نے دامن پھیلا کر آگے

بھر لیا اِسے اِن نہ آشناؤں سے

پھر پیار کے دھاگے میں پرونے کے بعد

کامل کیا گلے سے لگا کر، جو نہ مکمل تھے

ذرا سا جھٹکنے سے ھی یہ دلفریب

تمام حدوں کو پار کر گئے

کہا تھا کہ کل آرزو کے در پہ

سجائیں گے یہ نایاب موتی

ھوگئے فاصلے بہت دور مگر

جب گِر کر بکھر پڑے یہ بدنصیب موتی

اب ھم اِن کی تلاش کیا کریں

بدگمان کر چکے ھیں یہ بےوجود موتی

<span style=”color:#993300;”><span style=”color:#99cc00;”>All rights reserved by Zuellah Huma Ahmed</span>

</span></address>

Arabicجميع الحقوق محفوظة

Urduجملہ حقوق محفوظ ہیں


اب تو اُس لمحے کا انتظار ھے صرف

جس میں نہ ڈر ھو، نہ خوف ھو

نہ غموں کا کوئی ساتھ ھو

جس میں آلام سے فراق ھو

جس میں منزل کا طواف ھو

اب تو اُس لمحے کا انتظار ھے صرف

جس میں ھجر ھو، آزادی ھو

ھو دوری اور ملاپ جس میں

جو رنگوں کا اختلاف ھو

جس میں بیجان ھونے پہ جان آئے

جس کی حقیقت میں خواب سما جائے

جس میں سانسوں کا تھماؤ ھو

جس میں زندگی کا جھکاؤ ھو

جس میں اِس قفس سے نجات ھو

جس میں حیات کا اعتراف ھو

جس میں آنکھیں بند ھونے پر بھی

ھم پر روشنی کا غلاف ھو